سزیرین ڈلیوری کیسوں میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے:حکومت

نئی دہلی:حکومت نے آپریشن کے ذریعے زچگی کے بڑھتے معاملات پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے آج لوک سبھا میں کہا کہ اس کے لئے کئی وجوہات ذمہ دار ہیں جن میں خود حاملہ خواتین کی خواہش بھی شامل ہے۔ وزیر صحت جے پی نڈا نے وقفہ سوال میں کہا کہ یہ درست ہے کہ آپریشن سے زچگی کے معاملے بڑھے ہیں، خاص طور پرائیویٹ ہسپتالوں میں۔ مرکزی حکومت صحت کی منصوبہ بندی (سی جی ایچ ایس ) کے پینل میں شامل پرائیویٹ ہسپتالوں میں ہونےوالے کل زچگی کے معاملے میں سے 55.75 فیصد آپریشن سے ہو رہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ تمام سرکاری اداروں کو یہ ہدایت دی گئی ہے کہ جہاں تک ممکن ہو زچگی کے عمل کو آپریشن کے بغیر کرنے کی کوشش کریں۔ ان اداروں سے آپریشن سے ہونے والی زچگی کے اعدادوشمار بھی طلب کئے گئے ہیں۔ ایوان میں پیش اعداد و شمار کے مطابق، سی جی ایچ ایس کے پینل میں شامل پرائیویٹ ہسپتالوں میں کل 31،296 زچگی میں 17,450آپریشن سے اور 14,185بغیر آپریشن سے ہوئے ہیں۔ مسٹر نڈا نے کہا کہ آپریشن کے ذریعے زچگی کے معاملے بڑھنے کے کئی وجوہات ہیں۔
اس میں ایک تو حاملہ خواتین کی خود کی ترجیح بھی شامل ہے۔ اس کے علاوہ حمل کے دوران صحت کے خطرات بڑھنے اور آرام پسند طرز زندگی بھی اس کی وجہ ہے۔ متعدد معاملات میں لوگ کسی خاص دن اپنے بچے کی سالگرہ کے خواہاں ہوتے ہیں۔ اس کے علاوہ اب لوگ ایک یا دو ہی بچے کی خواہش کرتے ہیں اور اس وجہ سے ہر زچگی ان کے لئے اہم ہوتا ہے اور وہ اسے محفوظ بنانا چاہتے ہیں۔ وزیر صحت نے کہا کہ آپریشن کے ذریعے زچگی کرانا یا نہیں کرانا مکمل طور ماں پر منحصر ہے اور وہ ڈاکٹر کے مشورہ پر یہ فیصلہ کرتی ہیں۔

Title: cesarean deliveries have gone up in india government | In Category: صحت  ( health )